دشتِ محبت کی پیاس ۔ ۔ ۔

کچھ اس طرح بدلی ریت فراقِ یار کے بعد
عجب ہی موسمِ دل کی حالت بدلتی رہی

مٹ گئی پیاس زمین کی ہر بارش کے کے بعد
تپشِ ہجر بڑھتی رہی، جب جب برسات ہوتی رہی

رنگا رنگ پھول کھلے آغازِ بہار کے بعد
مگر خزاں گلشنِ دل میں طول پکڑتی رہی

دہکتا صحرا بھی سیراب ہوا ساون کے بعد
دشتِ محبت کی پیاس مگر بڑہتی رہی

بے حس سے ہو گئے موسموں سے ہم تیرے جانے کے بعد
نا جانے کب خیامٓ، گرمی جاتی رہی، سردی آتی رہی ۔ ۔ ۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s