جیتی ہوئی تقدیر کے ہم ہارے ہوئے دوست ۔ ۔ ۔

جیتی ہوئی تقدیر کے ہم ہارے ہوئے دوست
تیز برسات کے ہم جلائے ہوئے دوست

ہمیں مت ڈراؤ صحرا کی تپش سے
بہتی گنگا کے ہم پیاسے رہے ہوئے دوست

نہیں لگتا ہمیں ڈر اب جنگلی درندوں سے
جب انسان، انسانی خون کے پیاسے ہوئے دوست

تیز آندھی سے خوف کسے آئے گا یہاں
پودے گلشن کے بادِ صبا کے اکھاڑے ہوئے دوست

اڑ ہی جائیں گے سب پرندے اک روز
کاغذ کے پھول یہاں باغباں کے لگائے ہوئے دوست

کون بدلے گا؟ کیسے بدلے گا تقدیر خیامٓ
آنکھیں تو کھلی ہیں، ضمیر سوئے ہوئے دوست ۔ ۔ ۔

دشتِ محبت کی پیاس ۔ ۔ ۔

کچھ اس طرح بدلی ریت فراقِ یار کے بعد
عجب ہی موسمِ دل کی حالت بدلتی رہی

مٹ گئی پیاس زمین کی ہر بارش کے کے بعد
تپشِ ہجر بڑھتی رہی، جب جب برسات ہوتی رہی

رنگا رنگ پھول کھلے آغازِ بہار کے بعد
مگر خزاں گلشنِ دل میں طول پکڑتی رہی

دہکتا صحرا بھی سیراب ہوا ساون کے بعد
دشتِ محبت کی پیاس مگر بڑہتی رہی

بے حس سے ہو گئے موسموں سے ہم تیرے جانے کے بعد
نا جانے کب خیامٓ، گرمی جاتی رہی، سردی آتی رہی ۔ ۔ ۔

کچھ کلام تو کر۔ ۔ ۔

کچھ کلام تو کر چاہے برساتِ الزام ہی کر
کچھ کھیل تو کھیل    چاہے فریب ہی کر

سرے محفل چھیڑ بات ہمارے عشق کی
تعریف  نہ   سہی،    کوئی طنز     ہی کر

نا جان لے ہمارے دشمنوں کی، جلا ہی دے
نا مداح بن، سامنے انکے میرا نام ادا ہی کر

نہ    مانگ    ہمیں    ہاتھ     پھیلا   کر خدا سے
چھپ کر کسی کونے میں، عشق کی فریاد ہی کر

نا   بجا    ہمارے    پیار    کی     پیاس       ظالم
کسی پیاسے پرندے کی خاطر پانی رکھ دیا ہی کر

نا سن میری گذارشیں، نا کر پوری التجا خیامٓ
کوئی اپنی حسرت،  کوئی خواہش بیان ہی کر

Don’t Let My Life Scatter Again. . .

Her presence. . . Her presence is something very special to me. When she is with me I feel like I’m living. I’m living a life. . . I feel like a complete being. Without her I’m not even half. Because she is not my better half but fullest of mine. With her, I forget all pains and loneliness. Her presence heals me. She is more than all types of medications and above meditation. She entered in my life, rehabilitated me, cured my heart and gave me peace of mind. She is the only one who can retain my living life. That I have now. . . I always pray and beg to Almighty that please don’t take her away from me. Don’t let my life scatter again. . . Not again. . .