جیتی ہوئی تقدیر کے ہم ہارے ہوئے دوست ۔ ۔ ۔

جیتی ہوئی تقدیر کے ہم ہارے ہوئے دوست
تیز برسات کے ہم جلائے ہوئے دوست

ہمیں مت ڈراؤ صحرا کی تپش سے
بہتی گنگا کے ہم پیاسے رہے ہوئے دوست

نہیں لگتا ہمیں ڈر اب جنگلی درندوں سے
جب انسان، انسانی خون کے پیاسے ہوئے دوست

تیز آندھی سے خوف کسے آئے گا یہاں
پودے گلشن کے بادِ صبا کے اکھاڑے ہوئے دوست

اڑ ہی جائیں گے سب پرندے اک روز
کاغذ کے پھول یہاں باغباں کے لگائے ہوئے دوست

کون بدلے گا؟ کیسے بدلے گا تقدیر خیامٓ
آنکھیں تو کھلی ہیں، ضمیر سوئے ہوئے دوست ۔ ۔ ۔

کچھ کلام تو کر۔ ۔ ۔

کچھ کلام تو کر چاہے برساتِ الزام ہی کر
کچھ کھیل تو کھیل    چاہے فریب ہی کر

سرے محفل چھیڑ بات ہمارے عشق کی
تعریف  نہ   سہی،    کوئی طنز     ہی کر

نا جان لے ہمارے دشمنوں کی، جلا ہی دے
نا مداح بن، سامنے انکے میرا نام ادا ہی کر

نہ    مانگ    ہمیں    ہاتھ     پھیلا   کر خدا سے
چھپ کر کسی کونے میں، عشق کی فریاد ہی کر

نا   بجا    ہمارے    پیار    کی     پیاس       ظالم
کسی پیاسے پرندے کی خاطر پانی رکھ دیا ہی کر

نا سن میری گذارشیں، نا کر پوری التجا خیامٓ
کوئی اپنی حسرت،  کوئی خواہش بیان ہی کر

A Walk in Moonlight. . .

From Cold Moon to Wolf Moon, From Wolf Moon to Snow Moon . . .
From Drizzling Evening of December to Foggy Night of January to Combo Midnight of February. . .
An every night walk together in Purple Streetlight. . .
Holding hands so softly but with bonding tight. . .
Breathing out cold smoke behaving like a child. . .
Exchanging between Ice-cream after every bite. . .
Hours of stepping together in freezing temperature. . .
Warmth you’ll get more from your Love Knight. . .
In pin drop silence expressions will give million words,
Lips will be quiet but eyes will expose love dynamite. . .
Oh! In all these fantasy moments we spent quality time,
A kiss on your Forehead, I can’t miss O my Sweetest Moonlight . . .

😘😘😘😇😇🤗🤗🤗🤗