جیتی ہوئی تقدیر کے ہم ہارے ہوئے دوست ۔ ۔ ۔

جیتی ہوئی تقدیر کے ہم ہارے ہوئے دوست
تیز برسات کے ہم جلائے ہوئے دوست

ہمیں مت ڈراؤ صحرا کی تپش سے
بہتی گنگا کے ہم پیاسے رہے ہوئے دوست

نہیں لگتا ہمیں ڈر اب جنگلی درندوں سے
جب انسان، انسانی خون کے پیاسے ہوئے دوست

تیز آندھی سے خوف کسے آئے گا یہاں
پودے گلشن کے بادِ صبا کے اکھاڑے ہوئے دوست

اڑ ہی جائیں گے سب پرندے اک روز
کاغذ کے پھول یہاں باغباں کے لگائے ہوئے دوست

کون بدلے گا؟ کیسے بدلے گا تقدیر خیامٓ
آنکھیں تو کھلی ہیں، ضمیر سوئے ہوئے دوست ۔ ۔ ۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s